وزیر اعظم کی معاون  برائے  موسمیاتی تبدیلی  سے قطری وفد کی ملاقات

وزیر اعظم کی معاون برائے موسمیاتی تبدیلی سے قطری وفد کی ملاقات

رومینہ خورشید نے پاکستان کی موسمیاتی لچک کو بڑھانے کے لیے قطر کی حمایت کو سراہا

اسلام آباد: قطر کے ایک اعلی سطحی تین رکنی تکنیکی وفد نے کرنل احمد عبداللہ العابد اللہ کی قیادت میں وزیر اعظم کی کوآرڈینیٹر برائے موسمیاتی تبدیلی رومینہ خورشید عالم سے ملاقات کی۔ وزارت موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی رابطہ میں ہونے والی ملاقات کے دوران فریقین نے دو طرفہ دلچسپی کے مختلف امور اور موسمیاتی خطرے، ماحولیات کے تحفظ، پانی کانظام، توانائی، جنگلات اور آفات کے خطرے سے نمٹنے کے حوالے سے تعاون پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔وزیر اعظم کی موسمیاتی معاون رومینہ خورشید نے قطری وفد کو پاکستان کی موسمیاتی لچک کو بڑھانے اور ملک کی کمزور کمیونٹیز کی زندگیوں اور معاش کے تحفظ کے لیے وزیر اعظم کے مختلف کلین اینڈ گرین اقدامات کے بارے میں آگاہ کیا۔
رومینہ خورشید نے قطر کے سرکاری وفد کو آگاہ کیا کہ وزیر اعظم میاں محمد شہباز شریف کی قیادت میں موجودہ حکومت عالمی موسمیاتی عمل کو فروغ دینے کے لیے موسمیاتی سفارت کاری کے ذریعے مختلف ممالک کے ساتھ روابط پر زیادہ توجہ مرکوز کر رہی ہے تاکہ گلوبل وارمنگ اور اس کے نتیجے میں ہونے والی آفات بالخصوص ہیٹ ویوز، سیلاب، سطح سمندر میں اضافہ، زمینی کٹا ئوکے منفی اثرات سے نمٹا جا سکے۔ملاقات کے دوران، انہوں نے ملک کو درپیش مون سون کے موسموں میں گلوبل وارمنگ، موسمیاتی تبدیلی، ہیٹ ویوز اور تباہ کن سیلابوں کے چیلنجز اور اثرات پر بھی روشنی ڈالی۔ رومینہ خورشید عالم نے وفد کو بتایا کہ پاکستان موسمیاتی تبدیلیوں کے بڑھتے ہوئے شدید اثرات سے نبرد آزما ہے، جس سے اس کے ماحولیات، معیشت اور لوگوں کے لیے اہم چیلنجز ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ”ملک مسلسل اوسط درجہ حرارت میں اضافے کا سامنا کر رہا ہے، جس کی وجہ سے ملک بھر میں شدید سیلاب اور گرمی کی لہریں آتی ہیں۔ یہ شدید گرمی کے واقعات نہ صرف صحت عامہ کو خطرے میں ڈالتے ہیں بلکہ توانائی کے وسائل کو بھی دباتے ہیں اور پانی کی کمی کے مسائل کو بڑھاتے ہیں،”۔
وزیر اعظم کی موسمیاتی معاون نے موسمیاتی تبدیلی کے خطرے کو کم کرنے، ماحولیاتی اور توانائی کے تحفظ، پانی کی بچت، درخت لگانے کے پروگرام، سیلاب کے خطرے سے نمٹنے اور ہیٹ ویوز سے متعلق موجودہ حکومت کے مختلف اقدامات پر پیشرفت سے بھی آگاہ کیا۔قطری وفد کے سربراہ کرنل احمد عبداللہ العابد اللہ نے وزیر اعظم شہباز شریف کے ماحولیاتی تحفظ، موسمیاتی رسک اور ڈیزاسٹر مینجمنٹ، گرین پاکستان پروگرام، لیونگ انڈس انیشیٹو، گلیشیل لیک آٹ برسٹ فلڈ مینجمنٹ اور اربن ریزیلینس کے اقدامات کو سراہا۔
کرنل احمد عبداللہ العابد اللہ نے وزیراعظم کی کوآرڈینیٹر رومینہ خورشید عالم کو بتایا کہ قطر کی حکومت پاکستان کے موسمیاتی خطرات سے آگاہ ہے اور موجودہ حکومت کی جانب سے ملک کے مختلف سماجی و اقتصادی شعبوں بالخصوص زراعت، پانی، توانائی، غذائی تحفظ، صحت اور تعلیم پر موسمیاتی تبدیلی کے بڑھتے ہوئے اثرات سے نمٹنے کے لیے کوششیں کی جا رہی ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ قطری حکومت موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات بالخصوص صحت، تعلیم، فوڈ سیکیورٹی، پانی اور توانائی سمیت ماحولیاتی خطرات سے دوچار سماجی و اقتصادی شعبوں میں تعاون کو فروغ دینے اور مضبوط کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔
قطری وفد کے سربراہ کرنل احمد عبداللہ العابد اللہ نے بھی پاکستان کو موسمیاتی تبدیلی، ماحولیاتی تحفظ، نیشنل ڈیزاسٹر رسک مینجمنٹ اور سیلاب سے بچا کے اہداف کے حصول کے لیے ہر ممکن تکنیکی اور غیر تکنیکی معاونت فراہم کرنے کااعادہ کیا۔وزیراعظم کی کوآرڈینیٹر رومینہ خورشید عالم نے موسمیاتی تبدیلی، آفات کے خطرات سے نمٹنے اور ماحولیاتی تحفظ کے اہداف کے حصول کے لیے تعاون کے وعدے پر قطری وفد کا شکریہ ادا کیا۔
۔۔۔۔۔۔

About Rizwan Malik

Scroll To Top